Latest

اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت6 ماہ کی کم ترین سطح پر آگئی

اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت6 ماہ کی کم ترین سطح پر آگئی
کراچی (رپورٹ:سہیل افضل) ڈالر کی قیمت میں اضافے کی افواہیں دم توڑنے لگی ہیں۔ تفصیلات کے مطابق بدھ کو اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت6 ماہ کی کم ترین سطح پر آگئی ہے جس کے بعد اسٹیٹ بینک نے فاریکس ڈیلرز پر عائد 5 ہزار ڈالر فروخت کرنے کی حد (کیپ) کو ختم کر دیا ہے۔ مارکیٹ ذرائع کے مطابق بدھ کو اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت104.40روپے پر آگئی۔ منگل کو اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت 105.40 روپے تھی اس طرح ایک روز میں ایک روپے کی کمی دیکھنے میں آئی۔ بدھ کو انٹر بینک میں بھی ڈالر کی قیمت 104.40 روپے تھی اس طرح اوپن اور انٹر بینک میں ڈالر کی قیمت یکساں ہو گئی ہے۔ ڈیلرز کا کہنا ہے کہ بلیک مارکیٹ چلانے والی مافیا مسلسل یہ افواہیں پھیلا رہی تھی کہ فروری میں ڈالر 110 روپے سے بڑھ جائے گا، کچھ لوگ 115 اور 120 روپے کی بھی پیشگوئی کر رہے تھے لیکن اب محسوس ہوتا ہے کہ لوگوں کا خوف ختم ہو گیا ہے، ڈالر کی خریداری سے زیادہ فروخت کا رجحان بڑھ گیا ہے۔ فاریکس ڈیلرز ایسوسی ایشن کے چیئرمین ملک بوستان کا کہنا ہے کہ اسٹیٹ بینک نے ڈالر کی 5 ہزار سے زیادہ فروخت نہ کرنے کی پابندی ختم کر دی ہے اب بیرون ملک جانے والے طالب علم یا دیگر کاروباری افراد کاغذات دکھا کر مرضی کے ڈالر حاصل کر سکتے ہیں۔ ملک بوستان کا کہنا ہے کہ ڈالر کی ڈیمانڈ کم ہونے سے بلیک مارکیٹ ختم ہو گئی ہے، اگر ایکسپورٹ پروسیڈ بروقت واپس آنا شروع ہو گئیں تو ڈالر ایک ماہ بعد 103سے نیچے آ جائے گا۔


اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت6 ماہ کی کم ترین سطح پر آگئی

اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت6 ماہ کی کم ترین سطح پر آگئی
کراچی (رپورٹ:سہیل افضل) ڈالر کی قیمت میں اضافے کی افواہیں دم توڑنے لگی ہیں۔ تفصیلات کے مطابق بدھ کو اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت6 ماہ کی کم ترین سطح پر آگئی ہے جس کے بعد اسٹیٹ بینک نے فاریکس ڈیلرز پر عائد 5 ہزار ڈالر فروخت کرنے کی حد (کیپ) کو ختم کر دیا ہے۔ مارکیٹ ذرائع کے مطابق بدھ کو اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت104.40روپے پر آگئی۔ منگل کو اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت 105.40 روپے تھی اس طرح ایک روز میں ایک روپے کی کمی دیکھنے میں آئی۔ بدھ کو انٹر بینک میں بھی ڈالر کی قیمت 104.40 روپے تھی اس طرح اوپن اور انٹر بینک میں ڈالر کی قیمت یکساں ہو گئی ہے۔ ڈیلرز کا کہنا ہے کہ بلیک مارکیٹ چلانے والی مافیا مسلسل یہ افواہیں پھیلا رہی تھی کہ فروری میں ڈالر 110 روپے سے بڑھ جائے گا، کچھ لوگ 115 اور 120 روپے کی بھی پیشگوئی کر رہے تھے لیکن اب محسوس ہوتا ہے کہ لوگوں کا خوف ختم ہو گیا ہے، ڈالر کی خریداری سے زیادہ فروخت کا رجحان بڑھ گیا ہے۔ فاریکس ڈیلرز ایسوسی ایشن کے چیئرمین ملک بوستان کا کہنا ہے کہ اسٹیٹ بینک نے ڈالر کی 5 ہزار سے زیادہ فروخت نہ کرنے کی پابندی ختم کر دی ہے اب بیرون ملک جانے والے طالب علم یا دیگر کاروباری افراد کاغذات دکھا کر مرضی کے ڈالر حاصل کر سکتے ہیں۔ ملک بوستان کا کہنا ہے کہ ڈالر کی ڈیمانڈ کم ہونے سے بلیک مارکیٹ ختم ہو گئی ہے، اگر ایکسپورٹ پروسیڈ بروقت واپس آنا شروع ہو گئیں تو ڈالر ایک ماہ بعد 103سے نیچے آ جائے گا۔