Latest

سانحہ کچہری کیخلاف وکلاء کا ملک بھر میںسوگ، ریلیاں ، عدالتوں کا بائیکاٹ

سانحہ کچہری کیخلاف وکلاء کا ملک بھر میںسوگ، ریلیاں ، عدالتوں کا بائیکاٹ
کراچی / اسلام آباد (اسٹاف رپورٹر / ایجنسیاں) کراچی سمیت ملک بھر میں اسلام آباد ایف ایٹ کچہری میں دہشت گردی کے واقعہ کیخلاف وکلاء نے یوم سوگ مناتے ہوئے عدالتوں کا بائیکاٹ کیا‘ تمام شہروں میں عدالتی نظام مکمل بند رہا‘ وکلاء عدالتوں میں پیش نہ ہوئے‘ تمام وکلاء بار میں سیاہ جھنڈے لہرائے گئے‘ مختلف شہروں میں ریلیاں نکالی گئیں‘ کراچی میں وکلاء سراپا احتجاج بنے رہے اور انہوں نے ایم اے جناح روڈ پر علامتی دھرنا بھی دیا ، وکلاء نے کراچی میں عدالتوں کو سیکورٹی فراہم کرنے کا مطالبہ کیا ۔ عدالتی نظام معطل ہونے کے باعث ملک بھر میں عدالتی سائلین کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ چیف جسٹس سندھ ہائیکورٹ جسٹس مقبول باقر نے کہا ہے کہ وکلاء کو بہادری سےدہشت گردی کا مقابلہ کرنا ہوگا۔ تفصیلات کے مطابق کراچی ‘ حیدر آباد ‘ اسلام آباد‘ راولپنڈی‘ نوابشاہ‘ میرپور خاص‘ سکھر‘ لاہور‘ ملتان‘فیصل آباد‘ سرگودھا‘ بہاولپور‘ جھنگ‘ بہاولنگر‘ گوجرانوالہ‘ وہاڑی‘ خانیوالی‘ ساہیوال‘ ڈیرہ غازیخان‘ راجن پور‘ مظفر گڑھ‘ جہلم‘ گجرات‘کوئٹہ‘ خضدار‘ سبی‘ گلگت بلتستان سمیت ملک بھر میں پاکستان بار کونسل ‘ سپریم کورٹ بار کونسل‘ہائی کورٹ بار کونسلز ڈسٹرکٹ کورٹ بار کونسلز کے وکلاء سمیت تمام وکلاء نے ایف ایٹ کچہری دہشت گردی کے واقعہ کے خلاف ہڑتال کرتے ہوئے مختلف شہروں میں ریلیاں نکالیں۔ بار دفاتر پر سیاہ جھنڈے لہرائے گئے علاوہ ازیں سانحہ اسلام آبادکچہری کیخلاف پاکستان بار، سندھ بار کونسل ،سندھ ہائیکورٹ بار ایسوسی ایشن ، کراچی و ملیر بار ایسوسی ایشن نے مکمل بائیکاٹ کرنے کی اپیل کی تھی جس پر منگل کو کراچی بھر میں وکلا کی جانب سے ہڑتال کی گئی اور وکلا عدالتوں میں پیش نہیں ہوئے جبکہ سندھ ہائی کورٹ میں تمام بورڈ بھی ڈسچارج کردیئے گئے سندھ ہائی کورٹ بار میں جنرل باڈی اجلاس منعقد کیا گیا جس میں چیف جسٹس آف سندھ ہائیکورٹ جسٹس مقبول باقر اور ہائی کورٹ کے دیگر ججز نے شرکت کی اجلاس میں سانحہ اسلام کے شہدا کے لیے فاتحہ خوانی کی گئی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ جسٹس مقبول باقر نے کہا کہ یہ انتہائی افسوسناک واقعہ ہے اس کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے انہوں نے کہا قوموں کی تاریخ میں ایسے موقع آتے رہتے ہیں لیکن مایوس نہیں ہونا چاہیے ۔ اجلاس میں ہائی کورٹ بار کے جنرل سیکریٹری اقبال عاصم نے کہا کہ کل کے اجلاس میں ہمیں بتایا گیا کہ سب سے زیادہ خطرہ کراچی سٹی کورٹ کو لیکن وہاں پر ہی سیکورٹی کے انتطامات نہیں ہیں۔