Latest

لاہور میں غربت سے تنگ ماں نے اپنے 2 بچوں کو قتل کردیا، 3 دن سے بھوکے تھے اور کیا کرتی، ملزمہ

لاہور میں غربت سے تنگ ماں نے اپنے 2 بچوں کو قتل کردیا، 3 دن سے بھوکے تھے اور کیا کرتی، ملزمہ
لاہور (نمائندہ جنگ) تھانہ جوہر ٹائون کے علاقے میں غربت، فاقوں اور اپنے نشئی خاوند کی بے روزگاری سے تنگ آ کر ماں نے اپنے 2 جگر گوشوں کوخود ہی قتل کر ڈالا۔ پولیس نے ملزمہ کو گرفتار کرکے قتل کا مقدمہ درج کر لیا ہے،ملزمہ کا کہنا ہے کہ تین دن سے بھوکے تھے اور کیا کرتی۔ بتایا گیا ہے کہ تھانہ جوہر ٹائون ’’ای‘‘ بلاک کے رہائشی 25 سالہ محمد سنی خان جس کی 5سال قبل ایک مقامی فارماسسٹ محمد طاہر کی بیٹی بسمہ سے شادی ہوئی۔ شادی کے 2 سال بعد اس کی ایک بیٹی مناہل اور بیٹا محمد یوسف پیدا ہوا، مناہل کی عمر 2 سال جبکہ محمد یوسف 9 ماہ کا تھا۔ یہ بھی معلو م ہوا ہے کہ محمد سنی خان نے شادی کے وقت بتایا کہ وہ گاڑیوں کا کام کرتا ہے لیکن بعد میں معلوم ہوا کہ سنی خان بیروزگار ہے اور اس کا گزر اوقات لوگوں سے پیسے وغیرہ لیکر ہوتا ہے اور جہاںوہ رہتا ہے وہ رشتے داروں کا مشترکہ گھر ہے جس میں ایک کمرہ سنی خان کو ملا تھا بعدمیں جب بات فاقوں تک پہنچی تو بسمہ اپنے والدین سے پیسے لیکر گزارا کرتی تھی جس پراس کے گھر والوں نے بھی کہہ دیا کہ وہ گزشتہ کئی سالوں سے خرچہ برداشت کر رہے ہیں لہٰذا مزید وہ خرچہ نہیں دے سکتے۔ کچھ دن پہلے اس کے بیٹے محمد یوسف کی تقریب ہوئی اس کا خرچہ بھی بسمہ کے گھر والوں نے دیا جس کا بھی بسمہ کو رنج تھا اور وہ اپنے شوہر کو کہتی تھی کہ وہ کوئی کاروبار یا ملازمت کرے لیکن محمد سنی خان نشہ وغیرہ کرکے خاموش ہو جاتا تھا۔ گزشتہ روز بھی بچوں نے رونا شروع کیا تو گھر میں کھانا پکانے کے لئے کچھ نہیں تھا جس پر بسمہ نے اپنی بیٹی کو گھر کے واش روم میں پڑی بالٹی میں ڈبو کر مار دیا جبکہ اپنے 9 ماہ کے معصوم بیٹے کو زخم پر لگی پٹی کا پھندا بنا کر ہلاک کردیا جب اس کا خاوند اٹھا تو اس نے بچوں کے متعلق پوچھا تو اس نے کہا کہ سب کچھ ختم ہو گیا ہے، اب کوئی تم سے ڈیمانڈ نہیں کرے گا، جس پر سنی خان بچوں کو لیکر اسپتال پہنچا لیکن ڈاکٹروں نے ان کی موت کی تصدیق کر دی جس پر پولیس نے بسمہ کو گرفتار کر لیا۔


لاہور میں غربت سے تنگ ماں نے اپنے 2 بچوں کو قتل کردیا، 3 دن سے بھوکے تھے اور کیا کرتی، ملزمہ

لاہور میں غربت سے تنگ ماں نے اپنے 2 بچوں کو قتل کردیا، 3 دن سے بھوکے تھے اور کیا کرتی، ملزمہ
لاہور (نمائندہ جنگ) تھانہ جوہر ٹائون کے علاقے میں غربت، فاقوں اور اپنے نشئی خاوند کی بے روزگاری سے تنگ آ کر ماں نے اپنے 2 جگر گوشوں کوخود ہی قتل کر ڈالا۔ پولیس نے ملزمہ کو گرفتار کرکے قتل کا مقدمہ درج کر لیا ہے،ملزمہ کا کہنا ہے کہ تین دن سے بھوکے تھے اور کیا کرتی۔ بتایا گیا ہے کہ تھانہ جوہر ٹائون ’’ای‘‘ بلاک کے رہائشی 25 سالہ محمد سنی خان جس کی 5سال قبل ایک مقامی فارماسسٹ محمد طاہر کی بیٹی بسمہ سے شادی ہوئی۔ شادی کے 2 سال بعد اس کی ایک بیٹی مناہل اور بیٹا محمد یوسف پیدا ہوا، مناہل کی عمر 2 سال جبکہ محمد یوسف 9 ماہ کا تھا۔ یہ بھی معلو م ہوا ہے کہ محمد سنی خان نے شادی کے وقت بتایا کہ وہ گاڑیوں کا کام کرتا ہے لیکن بعد میں معلوم ہوا کہ سنی خان بیروزگار ہے اور اس کا گزر اوقات لوگوں سے پیسے وغیرہ لیکر ہوتا ہے اور جہاںوہ رہتا ہے وہ رشتے داروں کا مشترکہ گھر ہے جس میں ایک کمرہ سنی خان کو ملا تھا بعدمیں جب بات فاقوں تک پہنچی تو بسمہ اپنے والدین سے پیسے لیکر گزارا کرتی تھی جس پراس کے گھر والوں نے بھی کہہ دیا کہ وہ گزشتہ کئی سالوں سے خرچہ برداشت کر رہے ہیں لہٰذا مزید وہ خرچہ نہیں دے سکتے۔ کچھ دن پہلے اس کے بیٹے محمد یوسف کی تقریب ہوئی اس کا خرچہ بھی بسمہ کے گھر والوں نے دیا جس کا بھی بسمہ کو رنج تھا اور وہ اپنے شوہر کو کہتی تھی کہ وہ کوئی کاروبار یا ملازمت کرے لیکن محمد سنی خان نشہ وغیرہ کرکے خاموش ہو جاتا تھا۔ گزشتہ روز بھی بچوں نے رونا شروع کیا تو گھر میں کھانا پکانے کے لئے کچھ نہیں تھا جس پر بسمہ نے اپنی بیٹی کو گھر کے واش روم میں پڑی بالٹی میں ڈبو کر مار دیا جبکہ اپنے 9 ماہ کے معصوم بیٹے کو زخم پر لگی پٹی کا پھندا بنا کر ہلاک کردیا جب اس کا خاوند اٹھا تو اس نے بچوں کے متعلق پوچھا تو اس نے کہا کہ سب کچھ ختم ہو گیا ہے، اب کوئی تم سے ڈیمانڈ نہیں کرے گا، جس پر سنی خان بچوں کو لیکر اسپتال پہنچا لیکن ڈاکٹروں نے ان کی موت کی تصدیق کر دی جس پر پولیس نے بسمہ کو گرفتار کر لیا۔


لاہور میں غربت سے تنگ ماں نے اپنے 2 بچوں کو قتل کردیا، 3 دن سے بھوکے تھے اور کیا کرتی، ملزمہ

لاہور میں غربت سے تنگ ماں نے اپنے 2 بچوں کو قتل کردیا، 3 دن سے بھوکے تھے اور کیا کرتی، ملزمہ
لاہور (نمائندہ جنگ) تھانہ جوہر ٹائون کے علاقے میں غربت، فاقوں اور اپنے نشئی خاوند کی بے روزگاری سے تنگ آ کر ماں نے اپنے 2 جگر گوشوں کوخود ہی قتل کر ڈالا۔ پولیس نے ملزمہ کو گرفتار کرکے قتل کا مقدمہ درج کر لیا ہے،ملزمہ کا کہنا ہے کہ تین دن سے بھوکے تھے اور کیا کرتی۔ بتایا گیا ہے کہ تھانہ جوہر ٹائون ’’ای‘‘ بلاک کے رہائشی 25 سالہ محمد سنی خان جس کی 5سال قبل ایک مقامی فارماسسٹ محمد طاہر کی بیٹی بسمہ سے شادی ہوئی۔ شادی کے 2 سال بعد اس کی ایک بیٹی مناہل اور بیٹا محمد یوسف پیدا ہوا، مناہل کی عمر 2 سال جبکہ محمد یوسف 9 ماہ کا تھا۔ یہ بھی معلو م ہوا ہے کہ محمد سنی خان نے شادی کے وقت بتایا کہ وہ گاڑیوں کا کام کرتا ہے لیکن بعد میں معلوم ہوا کہ سنی خان بیروزگار ہے اور اس کا گزر اوقات لوگوں سے پیسے وغیرہ لیکر ہوتا ہے اور جہاںوہ رہتا ہے وہ رشتے داروں کا مشترکہ گھر ہے جس میں ایک کمرہ سنی خان کو ملا تھا بعدمیں جب بات فاقوں تک پہنچی تو بسمہ اپنے والدین سے پیسے لیکر گزارا کرتی تھی جس پراس کے گھر والوں نے بھی کہہ دیا کہ وہ گزشتہ کئی سالوں سے خرچہ برداشت کر رہے ہیں لہٰذا مزید وہ خرچہ نہیں دے سکتے۔ کچھ دن پہلے اس کے بیٹے محمد یوسف کی تقریب ہوئی اس کا خرچہ بھی بسمہ کے گھر والوں نے دیا جس کا بھی بسمہ کو رنج تھا اور وہ اپنے شوہر کو کہتی تھی کہ وہ کوئی کاروبار یا ملازمت کرے لیکن محمد سنی خان نشہ وغیرہ کرکے خاموش ہو جاتا تھا۔ گزشتہ روز بھی بچوں نے رونا شروع کیا تو گھر میں کھانا پکانے کے لئے کچھ نہیں تھا جس پر بسمہ نے اپنی بیٹی کو گھر کے واش روم میں پڑی بالٹی میں ڈبو کر مار دیا جبکہ اپنے 9 ماہ کے معصوم بیٹے کو زخم پر لگی پٹی کا پھندا بنا کر ہلاک کردیا جب اس کا خاوند اٹھا تو اس نے بچوں کے متعلق پوچھا تو اس نے کہا کہ سب کچھ ختم ہو گیا ہے، اب کوئی تم سے ڈیمانڈ نہیں کرے گا، جس پر سنی خان بچوں کو لیکر اسپتال پہنچا لیکن ڈاکٹروں نے ان کی موت کی تصدیق کر دی جس پر پولیس نے بسمہ کو گرفتار کر لیا۔


لاہور میں غربت سے تنگ ماں نے اپنے 2 بچوں کو قتل کردیا، 3 دن سے بھوکے تھے اور کیا کرتی، ملزمہ

لاہور میں غربت سے تنگ ماں نے اپنے 2 بچوں کو قتل کردیا، 3 دن سے بھوکے تھے اور کیا کرتی، ملزمہ
لاہور (نمائندہ جنگ) تھانہ جوہر ٹائون کے علاقے میں غربت، فاقوں اور اپنے نشئی خاوند کی بے روزگاری سے تنگ آ کر ماں نے اپنے 2 جگر گوشوں کوخود ہی قتل کر ڈالا۔ پولیس نے ملزمہ کو گرفتار کرکے قتل کا مقدمہ درج کر لیا ہے،ملزمہ کا کہنا ہے کہ تین دن سے بھوکے تھے اور کیا کرتی۔ بتایا گیا ہے کہ تھانہ جوہر ٹائون ’’ای‘‘ بلاک کے رہائشی 25 سالہ محمد سنی خان جس کی 5سال قبل ایک مقامی فارماسسٹ محمد طاہر کی بیٹی بسمہ سے شادی ہوئی۔ شادی کے 2 سال بعد اس کی ایک بیٹی مناہل اور بیٹا محمد یوسف پیدا ہوا، مناہل کی عمر 2 سال جبکہ محمد یوسف 9 ماہ کا تھا۔ یہ بھی معلو م ہوا ہے کہ محمد سنی خان نے شادی کے وقت بتایا کہ وہ گاڑیوں کا کام کرتا ہے لیکن بعد میں معلوم ہوا کہ سنی خان بیروزگار ہے اور اس کا گزر اوقات لوگوں سے پیسے وغیرہ لیکر ہوتا ہے اور جہاںوہ رہتا ہے وہ رشتے داروں کا مشترکہ گھر ہے جس میں ایک کمرہ سنی خان کو ملا تھا بعدمیں جب بات فاقوں تک پہنچی تو بسمہ اپنے والدین سے پیسے لیکر گزارا کرتی تھی جس پراس کے گھر والوں نے بھی کہہ دیا کہ وہ گزشتہ کئی سالوں سے خرچہ برداشت کر رہے ہیں لہٰذا مزید وہ خرچہ نہیں دے سکتے۔ کچھ دن پہلے اس کے بیٹے محمد یوسف کی تقریب ہوئی اس کا خرچہ بھی بسمہ کے گھر والوں نے دیا جس کا بھی بسمہ کو رنج تھا اور وہ اپنے شوہر کو کہتی تھی کہ وہ کوئی کاروبار یا ملازمت کرے لیکن محمد سنی خان نشہ وغیرہ کرکے خاموش ہو جاتا تھا۔ گزشتہ روز بھی بچوں نے رونا شروع کیا تو گھر میں کھانا پکانے کے لئے کچھ نہیں تھا جس پر بسمہ نے اپنی بیٹی کو گھر کے واش روم میں پڑی بالٹی میں ڈبو کر مار دیا جبکہ اپنے 9 ماہ کے معصوم بیٹے کو زخم پر لگی پٹی کا پھندا بنا کر ہلاک کردیا جب اس کا خاوند اٹھا تو اس نے بچوں کے متعلق پوچھا تو اس نے کہا کہ سب کچھ ختم ہو گیا ہے، اب کوئی تم سے ڈیمانڈ نہیں کرے گا، جس پر سنی خان بچوں کو لیکر اسپتال پہنچا لیکن ڈاکٹروں نے ان کی موت کی تصدیق کر دی جس پر پولیس نے بسمہ کو گرفتار کر لیا۔