Latest

اب کے ترے در سے گر گئے ہم

اب کے ترے در سے گر گئے ہم
اب     کے  ترے   در   سے   گر  گئے   ہم
پھر    یہ     ہی   سمجھ   کہ   مر   گئے    ہم
جوں        ور      ظر     ،     ترا      تصور
 تھا    پیش     ظر   ،   جدھر     گئے      ہم
جزا   اہلِ   صفا      بتا    تو      جوں    عکس
اے    آءئی ے!  کس    کے   گھر    گئے  ہم
کس      ے   یہ     ہمیں    بھلا    دیا  ہے
معلوم    ہیں    ،   کدھر     گئے       ہم
تھا     عالم     جبر    ،  کیا      بتا       دیں
کس    طور    سے     زیست   کر  گئے  ہم
جس   طرح     ہوا ،    اسی     طرح     سے
پیما ہ        عمر        بھر       گئے      ہم
 افسوس  کہ     درد!    اس  کو   جب  تک
  ہو    وے    ہی     خبر ،  گز ر   گئے     ہم
                                         خواجہ میر درد