Latest

اذیت کوئی تیرے غم کی ، میرے جی سے جاتی ہے

اذیت  کوئی تیرے غم کی ، میرے جی سے جاتی  ہے



اذیت      کوئی    تیرے  غم    کی  ،  میرے  جی   سے   جاتی  ہے

 کبھو     ٹک    دل   کیا     خامی،   تو   پھر   چھاتی   بھر  آتی   ہے

سناوں  کیوں    کے    اپنا    حال    مٰن  ،  کیا    سخت   مشکل   ہے

یہ     قصہ    جب    لگوں   کہنے    ،تو  اس    کی    نیند  آتی   ہے

نہیں  مشتاق    آئینے    کے    وہ    ،  جا     صاف    طینت    ہیں

صفا    تو    وارضی    ہے   ،  اور    کدورت    اس   کی   ذاتی   ہے

 قیامت     سر  زمین     دل      پہ     میری    حشر    برپا     ہے

ہوس    ،  ہر    دم      تمنائیں    تو    یہ    کچھ   اٹھاتی      ہے

  اگر   آئینہ   چار     آئینہ   پہنے    ،تو     نہ      ہو     سن     مکھ

  سپر    ہوں   تیر   مثر گاں    کا  ،  سو   یہ   میری   ہی    چھاتی   ہے

   پریکھا  نت     یہی      رہتا    ہے    مجھ  کو  ،    درد!  کیا    کہیے

  کہ    ایسی    زندگی  سی     چیز  یوں    ہی    مفت    جاتی     ہے

                                                                                   خواجہ میر درد