Latest

اپنا تو نہیں یا میں کچھ یار ہوں تیرا

اپنا تو نہیں  یا  میں کچھ  یار ہوں تیرا


اپنا     تو     نہیں     یار  میں    کچھ   یار  ہوں  تیرا

تو  جس  کی  طرف  ہووے  ،طرف   دار   ہوں    تیرا ک

وھنے   پر   پہ  مرے  ، جی  نہ  کڑھا  ، تیری   بلا  سے

اپنا    تو  نہیں  غم     مجھے   غم    خوار   ہوں    تیرا

تو   چاہے  نہ   چاہے     مجھے   کچھ  کام  نہیں  ہے

 آزاد  ہو ں   اس    سے   بھی  ،  گرفتار   ہوں    تیرا

تو    ہووے  جہاں  ،مجھ  کو   بھی   ہونا   وہیں   لازم

تو  گل  ہے     مری  جان  ،  تو     میں  خار  ہوں  تیرا

ہے  عشق   سے   میرے  یہ  ترے  حسن  کا    شہرہ

میں   کچھ   نہیں  ، پر  گرمی    بازار   ہوں    تیرا

میری  بھی  طرف     تو  کبھی  آجا   مرے   یوسف!

بڑھیا   کی  طرح  ،  میں  بھی   خریدار  ہوں     تیرا

اے   درد!  مجھے   کچھ   نہیں   اب    اور  تو   آزار

اس    چشم  سے  کہہ   دنیا  کہ   بیمار    ہوں    تیرا

                                                                   خواجہ میر درد