Latest

اگر مذہب گیا

اگر مذہب گیا


ہم  نشیں   کہتا  ہے: کچھ  پروا  نہیں مذہب گیا
میں یہ کہتا  ہوں  کہ بھائے   یہ  گیا ، تو  سب گیا
ہے عقیدوں  کا  ا ثر  اخلاق  انساں  پر   ضرور
اس جگہ کیا چیز  ہو گی ؟ وہ اثر   جب  دب  گیا
پیٹ    میں کھانا ،زباں پر کچھ   مسائل  نا تمام
قوم   کے معنی گئے ا  ور   روح کا   مطلب گیا
اتحاد  معنوی   ان  میں   برائے   نام   ہے
دیکھتے   ہو اک  گر وہ   اک  راہ ہو کر کب گیا
نوکری    کے  باب میں وہ پالسی    قائم  نہیں
ہوش  میں اؤ  وہ رنگ  روز رنگِ   شب   گیا
ہم یہی کہتے ہیں صاحب ! سوچ  لو  انجام   کار
دوسرا   پھر کیا   ٹھکانہ   ہے  اگر  مذہب  گیا!
اکبر الہ آبادی

1 Comment on اگر مذہب گیا

  1. I honestly learned about much of this, but never the less, I still considered it was valuable. Fine job!

Comments are closed.