Latest

ایک ننھّی سی اُمید – پر وین شا کر

ایک ننھّی سی اُمید 


اب تو شہر میں لوٹ آ ئے ہو
اب تو سب لمحے اپنے ہیں
کیا اب بھی کم فرصت ہو ؟
ہاں ۔لمحوں کی تیز روی نے مجھ کو بھی سمجھا یا ہے
دن کے شور میں اپنی صدا گم رہتی ہے
لیکن شام کا لہجہ تو سرگوشی ہے
جِم خانے کی گہری رات کی انگوری بانہوں میں آنے سے پہلے
جب و ہسکی آنکھوں میں ستارے بھر دے
اور سرشاری
بُھولے بھٹکے رستوں کے وہ سارے چراغ جلا دے       
جو تم ہَوا سے لڑ کر روشن رکھا کرتے تھے
کیا کوئی کرن ۔ننھّی سی کرن ۔میری ہو گی؟

                                                                      پر وین شا کر

2 Comments on ایک ننھّی سی اُمید – پر وین شا کر

  1. MUHAMMAD TASLEEM // January 14, 2012 at 8:34 am //

    NICE POETRY PARVEEN SHAKER

Comments are closed.