Latest

بھلاتا لاک ہوں لیکن بابر یاد آتے ہیں


بھلاتا  لاک  ہوں   لیکن  بابر  یاد  آتے ہیں

بھلاتا  لاک  ہوں   لیکن  بابر  یاد  آتے ہیں
الٰہی ترک اُلفت پر ، وہ کیوں یاد آتے ہیں
نہ چھڑ اے ہم نشیں ! کیفیتِ صہبا کے افسانے
شراب  بے خودی کے ، مجھ کو ساغر یاد  آتے ہیں
نہیں آتی  تو یا د   ان   کی ، مہینو ں  نہیں آتی
مگر جب یاد آتے ہیں ، تو  اکثر  یاد  آتے ہیں
حقیقت کھل گئی حسرت ، ترے ترک  محبت  کی
تجھے تو اب وہ پہلے سے بھی ، بڑھ کر یاد  آتے ہیں

                                                    حسرت موہانی