Latest

تجھی کو جو یاں جلوہ فرما نہ دیکھا

تجھی کو جو یاں جلوہ فرما  نہ دیکھا
تجھی   کو  جو  یاں  جلوہ   فرما    نہ    دیکھا
برابر  ہے      دنیا  کو       دیکھا   نہ   دیکھا
مرا  غنچہَ  دل       ہے        وہ    دل   گرفتہ
کہ  جس  کو   کسونے،   کبھو  وا  نہ   دیکھا
یگانہ ہے تو آہ بیگا نگی میں
کوئی        دوسرا      او ر       ایسا  نہ  دیکھا
اذیت  ،  مصبیت  ،        ملامت   ،      بلائیں
ترے    عشق  میں  ہم  نے  کیا  کیا    نہ  دیکھا
کیا  مجھ   کو   داغوں       نے  سرد     چراغاں
کبھو تو نے آ کر تماشا نہ دیکھا
تغافل   نے    تیرے   یہ  کچھ  دن      دکھائے
ادھر  تو    نے    لیکن  نہ     دیکھا     نہ  دیکھا
شب  و  روز  اے  درد  درپے   ہوں   اس  کے
کسو  نے  جسے  یاں   نہ   سمجھا     نہ     دیکھا
   خواجہ میر درد