Latest

جب عشق سکھاتا ہے آداب خود آگاہی

جب عشق سکھاتا ہے  آداب خود آگاہی
کھلتے   ہیں     غلاموں     پر   اسرار     شہنشاہی
عطار  ہو،     رومی ہو،      رازی ہو     ، غزالی  ہو
کچھ        ہاتھ  نہیں  آتا   بے   آہ  سحر  گاہی
نو مید  نہ  ہو  ان  سے  ، اے  رہبر    فرزانہ!
کم کوش  تو    ہیں  لیکن  بے  ذوق  نہیں  راہی
اے طائر      لاہوُ تی!  اُس  رزق  سے  موت  اچھی
جس  رزق  سے    آتی ہو  پرواز  میں     کوتاہی
دارا      و  سکندر     سے  وہ  مرد    فقیر    اولیٰ
ہو  جس   کی  فقیری  میں      بو ئے     اسد   اللہی
آئین      جوانمرداں   حق   گوئی  و  بے    باکی
ا  ﷲ   کے      شیروں  کو    آتی  نہیں     روباہی
علامہ اقبال