Latest

جگ میں کوئی نہ ٹک ہنسا ہو گا

جگ میں کوئی نہ ٹک ہنسا ہو گا


جگ   میں    کوئی  نہ  ٹک   ہنسا   ہو گا

کہ    نہ  ہنستے  میں ، رو  دیا     دیا    ہو گا

ان  نے  قصدا   بھی  میرے  نالے  کو

نہ   سنا      ہو     گا،  گر  سنا   ہو  گا

دیکھئے   اب  کے   غم   سے   جی      میرا

نہ     بچے    گا    بچے    گا   کیا    ہو  گا

دل  ،    زمانے   کے  ہاتھ     سے   سالم

کوئی    ہو     گا  جو  رہ  گیا      ہو  گا

حال   مجھ  غم     زدہ  کا  ، جس  لس نے

 جب     سب  سنا   ہو  گا   ،  رو  دیا  ہوگا

دل  کے    پھر   زخم   تازہ   ہوتے   ہیں کہیں

 غنچہ  کوئی  کھلا     ہو       گا

یک  بہ  یک  نام  لے     اٹھا       میرا

جی   میں  کیا  اس  کے  آ   گیا   ہو  گا

 میرے       نالوں   پہ    ، کوئی      دنیا

 بن    کیے      آ ہ  ،کم  رہا    ہو      گا

قتل  سے   میرے  ،  وہ  جو  باز     ر ہا

کسی       بد خواہ   نے   کہا      ہو   گا

  دل    بھی  اے     درد۱  قطرہ  خوں  تھا

آنسو وں       میں    کہیں  گرا   ہو  گا

                                         خواجہ میر درد