Latest

خدا سر سبز رکھے اس چمن کو مہرباں ہو کر

خدا سر سبز رکھے اس چمن کو مہرباں ہو کر
بہار  آئی  کھلے  گل زیب  صحن  بوستاں  ہو کر
عنا دِل  نے  مچائی  دھوم  سر گرم   فغاں ہو   کر
بچھا      فرشِ    زمرد   اہتمام     سبزہ     تر  میں
چلی  مستانہ   وش  بادِ     صبا  عنبر      فشاں   ہو  کر
عروج   نشہ   نشوونما   سے    ڈالیاں      جھومیں
ترانے    گائے  مرغانِ  چمن  نے  شادماں    ہو  کر
بلائیں    شاخ  گل   کی  لیں  نسیم  صبح     گاہی   نے
ہوئیں   کلیاں   شگفتہ  روئے    رنگیں  بتاں      ہو کر
کیا  پھولوں   نے  شبنم  سے  وضو  صحن    گلستان   میں
صدائے  نغمہ  بلبل  اُٹھی   بانگِ     اذاں   ہو     کر
ہوائے  شوق   میں   شاخیں   جھکیں  خالق  کے  سجدے  کو
ہوئی       تسبیح       میں    مصروف    ہر  پتی  زماں  ہو  کر
زبان برگ  گُل  نے    کی   دُعا    رنگیں  عبارت  میں
خدا  سر سبز  رکھے    ا س     چمن   کو  مہرباں  ہو  کر
       اکبر  الہ  آبادی