Latest

دل مرا ، با غ دل کشا ہے مجھے

دل مرا  ، با غ دل کشا ہے مجھے
دل         مرا  ،     با غ    دل     کشا         ہے        مجھے
 دیدہ ۱         جام       جہاں       نما          ہے        مجھے
چشمِ      نقش        قدم     ہوں     میں        بے      کس
خاک     آنکھوں      میں  ،             تو تیا       ہے       مجھے
مجھ    سے         ہر   چند        تو       مکدر             ہے
تجھ     سے         پر      اور     ہی    صفا       ہے        مجھے
کہیں  خاموش  ہو  کہ  مثلِ  شمعاے  زباں ! تجھ  سے  گلا ہے  مجھے
پانو        لرزے        ہے        مست       کے          مانند
شیشہ       مے      بھرا     ملا      ہے        مجھ          دے
درد!        تیرے        بھلے      کو       کہتا           ہوں
 یہ        نصحیت       سے          مدعا          ہے       مجھے
ورنہ        ان       بے        مروتوں         کے         لیے
اور       بھی        ہو      خراب        کیا      ہے     مجھے
                                                                                   خواجہ میردرد