Latest

سِتم گری کا ہر انداز مُجرما نہ لگا

سِتم گری کا  ہر  انداز   مُجرما نہ لگا
میں کیا کروں مرا دشمن مجھے بُرا نہ لگا
ہر اک کو زعم تھا کس کس کو نا خدا کہتے
 بھلا ہوا کہ سفینہ کنارے جا نہ لگا
مرے سُخن کا قرینہ ڈبو گیا مجھ کو
کہ جس کو حال سنایا اسے افسانہ لگا
برون در نہ کوئی روشنی نہ سایہ تھا
سبھی فساد مُجھے اندرونِ خانہ لگا
مَیں تھک گیا تھا بُہت پے بہ پے اُڑانوں سے
جبھی تو دام بھی اس بار آ شیانہ لگا
اس عہد ظلم میں مَیں بھی شریک جیسے
مرا سکوت مجھے سخت مُجرما نہ لگا