Latest

عجب واعظ کی دینداری ہے یا رب

عجب واعظ کی دینداری ہے یا رب


عجب واعظ کی دینداری ہے یارب
عداوت ہے اسے سارے جہاں سے

کوئی اب تک نہ یہ سمجھا کہ انساں
کہاں جاتا ہے ، آتا ہے کہاں سے،

وہیں سے رات کی ظلمت ملی ہے
چمک تارے نے پائی ہے جہاں سے

ہم اپنی دردمندی کا فسانہ
سنا کرتے ہیں اپنے رازداں سے

بڑی باریک ہیں واعظ کی چالیں
لرز جاتا ہے آواز اذاں سے
علامہ اقبال