Latest

معلوم نہیں آنکھیں یہ کیوں پھٹو بہی ہیں

معلوم نہیں آنکھیں یہ کیوں پھٹو  بہی  ہیں
معلوم  نہیں    آنکھیں   یہ   کیوں    پھٹو  بہی    ہیں
رونے  کی  طرف   کس    لیے   یہ  ٹوٹ   بہی    ہیں
کشتی   کی    طرح   آنکھیں  مری   اشک   میں،   یارو
جس تارنگہ سے بندھی تھیں ، چھوٹ بہی ہیں
میں  مثل   حباب   آنکھیں  تو  رو   رو  کے   بہا   دیں
پر   وہ    یہی  کہتا   ہے   سدا   جھوٹ    بہی    ہیں
سر  سبز  یہ  کس  جلوے  سے  ہیں  آنکھیں  ،جو  اتنا
دریا   کی   طرح   ،  کھیت   مرا    لوٹ  بہی   ہیں
اے   درد   سمجھ  سہج   نہ   ان  آنکھوں   کا    بہنا
چھاتی  کی  طرح  دل  کو   مرے  کوٹ   بہی   ہیں
  خواجہ میر درد