Latest

مقدور ہمیں کب ترے وصفوں کے رقم کا

مقدور ہمیں کب ترے وصفوں کے رقم کا
مقدور   ہمیں  کب   ترے    وصفوں    کے   رقم   کا
تھا   کہ     خداوند  ہے     تو     لوح       قلم    کا
اس   مسندِ  عزت    پہ    کہ  تو    جلوہ    نما      ہے
کیا     تاب   گزر  ہو وے   تعقل  کے     قدم   کا
بستے   ہیں   ترے   سایے    میں  سب   شیخ  و  برہمن
آباد   ہے   تجھ  سے    ہی  تو   گھر  دیر  و   حرم   کا
ہے  خوف   اگر  جی  میں،  تو  ہے  تیرے  غضب  سے
اور   دل  میں  بھروسا   ہے، تو  ہے  تیرے  کرم   کا
مانند حباب ، آنکھ تو اے درد! کھلی تھی
کھینچا    نہ    پر   اس   بحر   میں  عرصہ   کوئی    دم
خواجہ میر درد