Latest

پھول کو رنگ ستارے کو ضیاء کس نے دی!

پھول کو رنگ ستارے کو ضیاء کس نے دی!


اے غمِ دل تیرے ہونٹوں کو نوا کس نے دی!

جی اسے دیکھ کے کیوں آج بھرا آتا ہے

شعلہ عرضِ تمنا کو ہوا کس نے دی!

دل کے دریا میں گیا جو بھی وہیں ڈوب گیا

یہ مگر دھیان کی گلیوں میں صَدا کس نے دی!

اپنی ہی شکل ہے جس سمت نظر پڑتی ہے

شہر آئینہ میں آنکھوں کو سزا کس نے دی!
ہُو بہُو اس کی ہی آواز لگی ہے! دیکھو

وادی سنگ میں امجد یہ ندا کس نے دی!
امجد اسلام امجد