Latest

چاند میری طرح پگھلتا رہا

چاند میری طرح پگھلتا رہا


نیند میں ساری رات چلتا رہا

جانے کس دکھ سے دل گرفتہ تھا

مُنہ پہ بادل کی راکھ ملتارہا

میں تو پاؤں کے کانٹے چُنتی تھی

اور وہ راستہ بدلتا رہا

رات گلیوں میں جب بھٹکتی تھی

کوئی تو تھا جا ساتھ چلتا رہا

موسمی بیل تھی مَیں،سوکھ گئی

وہ تناور درخت ،پھلتا رہا

سَرد رُت میں،مسافروں کے لیے

پیڑ، بن کر الاؤ جلتا رہا

دل، مرے تن کا پھول سا بچہ

پتھروں کے نگر میں پلتا رہا

نیند ہی نیند میں کھلونے لیے

خواب ہی خواب میں بہلتا رہا
پروین شاکر