Latest

کیافرق داغ و گل میں کہ، جس گل میں بو نہ ہو

کیافرق داغ  و گل میں کہ، جس گل میں بو نہ ہو
کیا    فرق     داغ  و گل میں کہ،   جس   گل       میں     بو  نہ  ہو
کس    کام    کا    وہ    دل   ہے   کہ جس   دل   میں  تو  نہ   ہو
ہو وے      نہ  حول      و      قوت     اگر    تیری          درمیاں
جو     ہم       سے  ہو     سکے     ہے    ، سو  ہم    سے  کبھو  نہ  ہو
جا    کچھ   کہ   ہم    نے    کی     ہے      تمنا  ،    ملی     مگر
یہ     آرزو     رہی  ہے    کہ    کچھ     آرزو         نہ    ہو
جوں    شمع     جمع        ہو ویں  گر  اہل         زبان        ہزار
آپس       میں          چا ہیے       کہ    کبھی   گفتگو    نہ   ہو
جوں    صبح  ،  چاک      سینہ     مرا  ،     اے     رفو        گراں۱
یاں     تو  کِس   و  کے      ہاتھ      سے      ہر گز      رفو  نہ  ہو
اے  درد  زنگ  صورت      اگر     ا س  میں      جا       کرے
اہل  صفا      میں     آئینہ       دل      کو     رو      نہ    ہو
خواجہ میر درد