Latest

ہم تجھ سے کس ہوس کی فلک جستجو کریں

ہم تجھ سے کس ہوس کی فلک جستجو کریں


ہم  تجھ سے کس  ہوس  کی   فلک   جستجو  کریں
دل   ہی   نہیں  رہا   ہے  جو  کچھ  آرزو  کریں
مٹ     جائیں    ایک   آن   میں کثرت        نمائیاں
ہم    آئینے    کے    سامنے   جب    آکے  ہو   کریں
تر      دامنی       پہ       شیخ     ہماری      نہ    جائیو
دامن     نچو ڑ      دیں     تو    فرشتے    وضو   کریں
سر   تا    قدم    زبان    ہیں   جوں شمع   گو   کہ   ہم
پر     یہ     کہاں    مجال   جو   کچھ   گفتگو     کریں
ہر چند آئینہ ہوں پہ اتنا ہوں نا قبول
منہ    پھیر  لے    وہ     جس   کے  مجھے   رو برو  کریں
لے   گل   کو    ہے     ثبات    ،نہ   ہم  کو  ہے  اعتبار
کس   بات    پر   چمن   ہوس   ر نگ   و   بو      کریں
ہے     اپنی    صلاح     کہ    سب      زاہدان    شہر
اے     درد!    آکے     بیعت  ِ  دست    سبو   کریں
 خواجہ میر درد