Latest

ہے غلط ، گر گمان میں کچھ ہے

ہے غلط ، گر گما ن میں کچھ ہے
ہے       غلط   ،  گر  گمان  میں  کچھ   ہے
تجھ سودا بھی جہاں میں کچھ ہے
دل    بھی  تیرے  ہی  ڈھنگ    سیکھا   ہے
آن  میں  کچھ  ہے،  آن   میں  کچھ   ہے
بے    خبر     تیغ     یار!    کہتے       ہیں
باقی    اس  نیم    جان    میں    کچھ    ہے
 ان    دنوں   کچھ  عجب    ہے    حال   مرا
دیکھتا      کچھ  ہوں  دھیان    میں  کچھ  ہے
اور   بھی     چاہیے     سو    کہیے      اگر
 دل     نا     مہربان    میں   کچھ      ہے
 درد!  تو  جو  کرے  ہے    جی  کا    زیاں
 فائدہ   اس    زیان   میں   کچھ      ہے؟
                                                  خواجہ میردرد